وقت کے ساتھ چلا توُ بھی نہیں میں بھی نہیں

وقت کے ساتھ چلا توُ بھی نہیں میں بھی نہیں

by WebDesk
0 comment

غـــــزل

منظر زیدی

وقت کے ساتھ چلا توُ بھی نہیں میں بھی نہیں
سب کی آنکھوں کی ضیا توُ بھی نہیں میں بھی نہیں
بے وفا کیسے کہیں سارے زمانے کو بھلا
جبکہ پابندِوفا توُبھی نہیں میں بھی نہیں
اُس نے یہ سوچ کے اب چھوڑ دیا قسمیں کھانا
اپنے وعدے پہ رہا توُ بھی نہیں میں بھی نہیں
ہے اسی واسطے ہر سمت اجالے کی کرن
جل گیا جل کے بجھا توُ بھی نہیں میں بھی نہیں
کیوں سبھی مانگنے آتے ہیں محبت کی مراد
پیار کا جبکہ خدا توُ بھی نہیں میں نہیں
چل تو دئے کھوج میں ہم آج انا کی منظرؔ
جانتا اسُکا پتہ توُ بھی نہیں میں بھی نہیں

Related Articles

Leave a Comment

@2022 – Heavenmail.in |  All Right Reserved.