تمہارا قُرب پانے سے ہوئی ہے شام مستانی

تمہارا قُرب پانے سے ہوئی ہے شام مستانی

by WebDesk
0 comment

غزل

پرویز مانوس

 

تمہارا قُرب پانے سے ہوئی ہے شام مستانی
ذراسا مسکرانے سے ہوئی ہے شام مستانی

عجب خاموشیاں چھائی ہوئی تھیں چار سُو جاناں
تمہارے گُنگنانے سے ہوئی ہے شام مستانی

ستارے اوڑھ کر نکلی تُو جس دم ڈل کنارے پر
شکارے جگمگانے سے ہوئی ہے شام مستانی

رگ و پے میں سرایت کر گئی خوشبو عقیدت کی
ترے کمرے میں آنے سے ہوئی ہے شام مستانی

اداسی بن کے تاریکی نے سب کچھ ڈھانپ رکھا تھا
ترا چہرہ دکھانے سے ہوئی ہے شام مستانی

قدم رکھتے ہی محفل میں چھلک اُٹھے ہیں پیمانے
ذرا گھونگھٹ اُٹھانے سے ہوئی ہے شام مستانی

ہماری یاد میں مل کر ہجومِ شہر میں یارو
بھری محفل سجانے سے ہوئی ہے شام مستانی

بُھلا کر کُلفتیں ساری لگے جب میکدے جانے
صُراحی ٹوٹ جانے سے ہوئی ہے شام مستانی

تری آغوش میں تھا جس گھڑی میں بے خبر سویا
صدا دے کر جگانے سے ہوئی ہے شام مستانی

کبھی ویران راتوں میں ہماری قبر پر آکر
تری چادر چڑھانے سے ہوئی ہے شام مستانی

قلم تیرا چلا کچھ اس طرح مانوس صحرا میں
سُخن کے گُل کھلانے سے ہوئی ہے شام مستانی

پرویز مانوس
نٹی پورہ سرینگر
9622937142

Related Articles

Leave a Comment

@2022 – Heavenmail.in |  All Right Reserved.